Sattar Qadam sy Pyasi Behen Dekhti Rahi Mp3 Song Download By Kazmi Brothers 2022

Sattar Qadam sy Pyasi Behen Dekhti Rahi Mp3 Song Download Links Check Below. Sattar Qadam sy Pyasi Behen Dekhti Rahi Song is the most popular , , Song. It is Sattar Qadam sy Pyasi Behen Dekhti Rahi Song released on . Sattar Qadam sy Pyasi Behen Dekhti Rahi Mp3 Song sung by the most popular voice. Sattar Qadam sy Pyasi Behen Dekhti Rahi has been a huge hit with the listeners and has touched the hearts of many. Sattar Qadam sy Pyasi Behen Dekhti Rahi Song Download Free And listen online in HD High-Quality Audio 320Kbps only on ostpk. Download Sattar Qadam sy Pyasi Behen Dekhti Rahi Song Mp3 In Your Mobiles Free With Fast Links. Sattar Qadam sy Pyasi Behen Dekhti Rahi Mp3 Song Download And Online Player Check Below. Sattar Qadam sy Pyasi Behen Dekhti Rahi Song has been viewed and downloaded millions of times on Ostpk.com.

Sattar Qadam sy Pyasi Behen Dekhti Rahi Mp3 Song Download Kazmi Brothers.jpg

Sattar Qadam sy Pyasi Behen Dekhti Rahi Mp3 Song Download & Listen For Free

Sattar Qadam sy Pyasi Behen Dekhti Rahi
0:00

Click To Download

Sattar Qadam sy Pyasi Behen Dekhti Rahi Video Song

YouTube video

Sattar Qadam sy Pyasi Behen Dekhti Rahi SongDetails

Who Sung Sattar Qadam sy Pyasi Behen Dekhti Rahi Song?

Sattar Qadam sy Pyasi Behen Dekhti Rahi Lyrics

پیاسے گلے پہ بھائی کے چلتی رہی چھری
ستّر قدم سے پیاسی بہن دیکھتی رہی

کہتی تھی کیا اسی لئے پیسی تھی چکیاں؟
چادر سے صاف کرتی تھی زخموں کو رو کے ماں
زخمی سرِ حسین تھا زہرا کی گود تھی

روکے ہوئے تھے پیار میں خنجر کی دھار کو
بیٹے سے کتنا پیار تھا دلدل سوار کو
رکھے ہوئے تھے شہہ کے گلے پر گلا علی

خنجر سے شہہ کی زلفیں ہٹانے لگا لعیں
داڑھی کی سمت ہاتھ بڑھانے لگا لعیں
آنکھوں پہ ہاتھ رکھے ہوئے تھا ہر اک نبی

مقتل میں چار سال کی زہرا کو گود میں
اک بار پھر اٹھا لے سکینہ کو گود میں
افسوس قاتلوں سے اجازت نہیں ملی

چہرہ وطن کی سمت وہ کرتا تھا بار بار
آنکھوں میں تھا بھرا ہوا صغرا کا انتظار
ہائے غریبِ زہرا کی آنکھیں کھلی ہوئی

کہتا تھا وہ اشاروں میں زینب سے جاؤ گھر
آنکھوں کو بند کرلو کہ کٹ جائے میرا سر
سینے پہ شہہ کے زانو تھا رکھے ہوئے شقی

لاشہ فرات پر کبھی اٹھا کبھی گرا
کرب و بلا میں حشر تکلم بپا ہوا
عباس تم کہاں ہو صدا جب یہ شہہ نے دی