Shahadat Mola Ali as Noha Mp3 Song Download By Syed Irfan Haider 2022

Shahadat Mola Ali as Noha Mp3 Download Links Check Below. Shahadat Mola Ali as Noha is the most popular , . It is written by and Shahadat Mola Ali as Noha released on . Shahadat Mola Ali as Noha Mp3 sung by the most popular voice. Shahadat Mola Ali as Noha has been a huge hit with the listeners and has touched the hearts of many. Shahadat Mola Ali as Noha Song Download Free And listen online in HD High-Quality Audio 320Kbps only on ostpk. Download Shahadat Mola Ali as Noha Song Mp3 In Your Mobiles Free With Fast Links. Shahadat Mola Ali as Noha Mp3 Song Download And Online Player Check Below. Shahadat Mola Ali as Noha Song has been viewed and downloaded millions of times on Ostpk.com.

Shahadat Mola Ali as Noha Mp3 Song Download Syed Irfan Haider.jpg

Shahadat Mola Ali as Noha Mp3 Download & Listen For Free

Shahadat Mola Ali as Noha
0:00

Click To Download

Shahadat Mola Ali as Noha Video

YouTube video

Shahadat Mola Ali as Noha Details

Who Sung Shahadat Mola Ali as Noha ?
Who Comsposed Music Of Shahadat Mola Ali as Noha ?
Who is Lyrics Writer Of Shahadat Mola Ali as Noha ?

Shahadat Mola Ali as Noha Lyrics

کس نے مارا علی(ع) کو ہر سُو اداسی چھائی
ہائے عباس (ع) پہ کیسی یہ قیامت آئی
علی علی ہائے

خانہِ حق میں یہ غضب ہوگیا
دیتے ہیں جبریل یہ روکر صدا
قتل نمازی ہوا

گھر میں زہراؑ کے ماتم بپا ہے
قتل غازیؑ کا بابا ھوا ھے

آج کوفے میں محشر بپا ھے
قتل غازیؑ کا بابا ھوا ھے

ہائےتلوار چلی رب کا ولی زخمی ھوا
ھائے افسوس
ہر نمازی کے لبوں پر تھی یہی ایک صدا
واحسرتا ھائے علیؑ وا غربتا
سر شکستہ ھوا ھائے خون بہنے لگا
شور مسجد سے یہ اُٹھ رہا ھے
قتل غازیؑ کا بابا ھوا ھے

جب بھی بابا کے عمامے پہ نظر جاتی ھے
ھائے افسوس
بس یہ شبیرؑ کے ہونٹوں پہ صدا آتی ھے
واحسرتا ھائے علیؑ وا غربتا
یہ یتیمی کا غم ھائے سہہ نا پائینگے ھم
سنکے یہ بات دل پھٹ رہا ھے
قتل غازیؑ کا بابا ھوا ھے

اپنی بہنوں کوجو میت سےچھڑاتےہیں حسنؑ
ہائے افسوس
گھر سے یہ کہکے جنازے کو اُٹھاتے ہیں حسنؑ
واحسرتا ھائے علیؑ وا غربتا
میری بہنوں سنو ھائے الوداع بول دو
جانتا ہوں یہ صدمہ بڑا ھے
قتل غازیؑ کا بابا ھوا ھے

باپ کےقدموں میں سررکھکے یہ زینبؑ نےکہا
ہائے افسوس
ہاتھ اب سر پہ میرے کون رکھے گا بابا
واحسرتا ھائے علیؑ وا غربتا
چھوڑ جاؤگے تم ھائے یاد آؤگے تم
وقت کیسا یہ ہم پہ پڑا ھے
قتل غازیؑ کا بابا ھوا ھے

جب بھی کوفے میں بقیعہ سے ہوا آتی ھے
ہائے افسوس
ٖفاطمہ زہراؑ کے رونے کی صدا آتی ھے
واحسرتا ھائے علیؑ وا غربتا
ھے مرا دل حزیں ھائے چین ملتا نہیں
قبر میں جب سے میں نے سنا ھے
قتل غازیؑ کا بابا ھوا ھے

ھائے ذیشان سے کہتا ہے یہ عرفانِ عزا
ھائے افسوس
دل سے آجاتی ھے خود روزِ شہادت یہ صدا
واحسرتا ھائے علیؑ وا غربتا
ہم نہ بھولے کبھی ھائے زخمِ مولا علیؑ
آج ھر گھر میں فرشِ عزا ھے
قتل غازیؑ کا بابا ھوا ھے

بر دشمنِ مولا علی ع لعنت بیشمار

لعنت بر دشمن علی ع
لعنت بر دشمن علی ع
اے قاتل حیدر تیرے کردار پے لعنت
لعنت بیشمار
مکار پے اعیار پے غدار پے لعنت
لعنت بیشمار
جو ضرب لگائی ہے میرے مولا ع کو تونے
اس وار پے لعنت تیری تلوار پے لعنت

لعنت بیشمار